غذائیں جو پٹھوں کی تعمیر میں مدد کرتی ہیں

ہر کوئی اپنے پٹھوں کو مضبوط اور خوبصورت بنانا پسند کرتا ہے۔ اس کے لئے جسمانی سرگرمی اور اچھائی کی ضرورت ہوتی ہے۔

دراصل صحیح غذا جسم کو حیرت انگیز انداز میں بنانے میں مدد دیتی ہے اور ہارمونز کا توازن بھی برقرار رکھتی ہے۔

یہاں کچھ کھانے کی اشیاء ہیں جو پٹھوں کی تعمیر کے لئے اچھے ہیں.

سویابین
سویابین میں پروٹین کی مقدار زیادہ ہوتی ہے اور ایک کپ میں 37 گرام پروٹین ہوتا ہے۔ کہنے کی ضرورت نہیں، پٹھوں کی تعمیر کے لئے پروٹین ضروری ہے.

خواتین کو ایک دن میں 46 گرام کی ضرورت ہوتی ہے جبکہ مردوں کو 5 گرام کی ضرورت ہوتی ہے. تاہم ، اگر آپ پٹھوں کی تعمیر کرنا چاہتے ہیں اور کام کرنا چاہتے ہیں تو ، جسم کو پٹھوں کی مرمت اور پٹھوں کے نئے ٹشو بنانے کے لئے زیادہ پروٹین کی ضرورت ہوتی ہے۔ سویابین میں پروٹین کے ساتھ ساتھ میگنیشیم بھی ہوتا ہے جو وزن برداشت کرنے والی ورزش کے ذریعے پٹھوں کی تعمیر میں مدد دیتا ہے۔

امرود اس مزیدار پھل کا ایک کپ 4.2 گرام پروٹین پر مشتمل ہوتا ہے اور اس میں وٹامن سی بھی ہوتا ہے جو جلد کی صحت کو بہتر بناتا ہے۔ وٹامن سی سے بھرپور غذائیں پٹھوں کی تعمیر کے لیے خون کی گردش کو بھی بہتر بناتی ہیں۔ یہ ضروری ہے.

مچھلی
مچھلی بھی پروٹین کا ایک اچھا ذریعہ ہے جبکہ اس میں موجود اومیگا تھری فیٹی ایسڈز بھی ورزش کرنے والوں میں جسمانی چربی کو کم کرکے پٹھوں کی تعمیر میں مدد دیتے ہیں۔

چربی
سے پاک پروٹین کی کافی مقدار کو تھوڑا سا گوشت کے ساتھ جسم میں شامل کیا جاسکتا ہے جبکہ اس میں بہت زیادہ آئرن بھی ہوتا ہے جو جم میں کارکردگی کو بہتر بناتا ہے۔

گوشت اگرچہ طبی ماہرین ابھی تک اس بات پر متفق نہیں ہو سکے ہیں کہ گوشت نقصان دہ ہے یا فائدہ مند، ایک بات واضح ہے: گوشت کا استعمال ہارمون ٹیسٹوسٹیرون کی سطح کو بڑھاتا ہے، خاص طور پر اگر آپ کم چربی والا گوشت کثرت سے کھاتے ہیں۔

انڈے انڈے وٹامن ڈی سے بھرپور ہوتے ہیں، جو خون میں ٹیسٹوسٹیرون کی سطح کو معمول پر رکھنے میں مدد دیتے ہیں۔ ایک انڈا آپ کی روزمرہ کی غذا کا حصہ ہونا چاہئے، لیکن زیادہ کھانے سے پہلے ڈاکٹر سے مشورہ کرنا ضروری ہے.

تربوز
تربوز خون کی گردش کو بہتر بناتا ہے جس کے دل پر مثبت اثرات مرتب ہوتے ہیں اور کولیسٹرول لیول کو کنٹرول کرنے میں مدد ملتی ہے، مسئلہ صرف یہ ہے کہ یہ پھل سال کے ایک مخصوص وقت میں ہی کھایا جاسکتا ہے۔

گوبھی
گوبھی جسم میں ایسٹروجن (فیملی ہارمون) کی سطح کو کم کرتی ہے جبکہ ٹیسٹوسٹیرون کی سطح میں اضافہ کرتی ہے، اسے کسی بھی شکل میں کھانا فائدہ مند ہے۔

شہد
جسم کے مدافعتی نظام کو مضبوط بنانے کے لیے اچھا ہے، دن میں ایک چائے کا چمچ شہد فائدہ مند ثابت ہوسکتا ہے۔

لہسن
لہسن میں ایک ایسا کیمیکل پایا جاتا ہے جو تناؤ کو کم کرتا ہے جو بالواسطہ طور پر پٹھوں کی تعمیر میں مدد دیتا ہے۔

انگور
میں موجود اجزا عمر بڑھنے کے اثرات کو سست کرتے ہیں جبکہ ٹیسٹوسٹیرون کی سطح کو بڑھانے میں بھی مدد دیتے ہیں، اس لیے روزانہ اس مزیدار پھل کی تھوڑی سی مقدار کا استعمال فائدہ مند ہے۔

بیج
ہر قسم کے بیج وٹامن ڈی اور پروٹین سے بھرپور ہوتے ہیں جنہیں سوپ، سلاد، تلی ہوئی یا کسی اور شکل میں کھایا جاسکتا ہے، یہ نہ صرف ٹیسٹوسٹیرون کی سطح کو برقرار رکھنے میں مددگار ثابت ہوتے ہیں بلکہ دل کو صحت مند بھی رکھتے ہیں۔

دودھ
ایک وٹامن سے بھرپور مشروب ہے جو پٹھوں کی تعمیر میں مدد کرتا ہے، اس میں کیلشیم ہوتا ہے جو ہڈیوں کو مضبوط کرتا ہے جبکہ وٹامن ڈی ٹیسٹوسٹیرون کی سطح کو بڑھاتا ہے۔

چاکلیٹ
ہائی کوالٹی ڈارک چاکلیٹ میں 70 فیصد کوکا ہوتا ہے جو اینٹی آکسیڈنٹس سے بھرپور ہوتا ہے جو صحت کے لیے فائدہ مند ہوتا ہے۔ بصورت دیگر مشروبات یا دہی میں شوگر فری کوکا پاؤڈر کا استعمال بھی فائدہ مند ہے۔

خشک
میوہ جات جیسے انناس، چیری اور سیب جسم کو زیادہ کیلوریز فراہم کرتے ہیں جبکہ فائبر اور اینٹی آکسائیڈنٹس بھی جسم میں شامل ہوتے ہیں۔ اسکواش چھیل کر پیس لیں اور رس نچوڑ لیں۔

پستہ گری دار میوے اور ان سے بنے مکھن ان لوگوں کے لیے بھی فائدہ مند ہیں جو پٹھوں کی تعمیر کرنا چاہتے ہیں۔ بادام جیسے گری دار میوے کیلوریز، پروٹین اور صحت مند چربی سے بھرپور ہوتے ہیں، انہیں ایسی کھالوں یا غذا کا حصہ بناتے ہیں۔

دال
دالیں ایک خفیہ ہتھیار ہے جو پٹھوں کو تیزی سے بڑھنے میں مدد کرتا ہے۔ یہ ایک سستا، آسان اور تیز ترکیب ہے جسے آپ چاول کے ساتھ کھا سکتے ہیں اور سوپ میں شامل کرسکتے ہیں. ایک کپ دال میں 18 گرام پروٹین اور 40 گرام سستے ہضم ہونے والے کاربوہائیڈریٹ ہوتے ہیں جو جسم کو دیرپا توانائی فراہم کرتے ہوئے بلڈ شوگر لیول کو مستحکم رکھنے میں بھی مدد دیتے ہیں۔

 

 

 

 


This e-mail and any attachments are confidential and intended solely for the addressee and may also be privileged or exempt from disclosure under applicable law. If you are not the addressee, or have received this e-mail in error, please notify the sender immediately, delete it from your system and do not copy, disclose or otherwise act upon any part of this e-mail or its attachments. Any opinion or other information in this e-mail or its attachments that does not relate to the business of HBL is personal to the sender and is not given or endorsed by HBL. Internet communications are not guaranteed to be secure or virus-free. HBL does not accept responsibility for any loss arising from unauthorised access to, or interference with, any Internet communications by any third party, or from the transmission of any viruses. Replies to this e-mail may be monitored by HBL for operational or business reasons.